Tags

فیاض الحسن چوہان اور عظمیٰ بخاری کے درمیان تلخ کلامی۔۔۔ شہبازشریف کو قاتل اعلیٰ اور للُو قرار دیدیا۔
آپ اکبربگٹی کیس اور لال مسجد کیس میں جنرل مشرف کو تو پھانسی دینے کو تیار ہیں لیکن ماڈل ٹاؤن سانحے کی ذمہ داری لینے کو تیار نہیں ہیں۔ گلو بٹ ایس ایس پی سے ایسے گلے ملتا ہے جیسے وہ حج کرکے آیا ہو، آفتاب پھلرواں گلو بٹ کو فون کرکے بلاتا ہے کہ آپکو الوبٹ بلارہا ہے کہ ماڈل ٹاؤن آئیں اور کارنامے سرانجام دیں۔ رانا ثناء اللہ جوڈیشل کمیشن سے باہر نکل کر وکٹری کا نشان ایسے بناتا ہے جیسے کوئی بہت بڑا کارنامہ کیا ہو۔فیاض الحسن چوہان